Home / میموریل لیکچر / غالب انسٹی ٹیوٹ فخرالدین علی احمد میموریل لکچرکاانعقاد

غالب انسٹی ٹیوٹ فخرالدین علی احمد میموریل لکچرکاانعقاد

غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیراہتمام فخرالدین علی احمد میموریل لکچرکے موقع پر عہدِ حاضر کے ممتاز ادیب و دانشور جناب اشوک واجپئی نے’’اپنی اپنی آگ، کبیر اور غالب‘‘کے موضوع پرخطبہ پیش کرتے ہوئے آپ نے امیرخسرو، تلسی داس، کبیر اورغالب کو ہندستانی تہذیب و ثقافت اور شعری روایت کا ستون قرار دیا۔ آپ نے کبیراور غالب کے کلام کا تقابلی مطالعہ پیش کرتے ہوئے فرمایاکہ غالب اور کبیر کی شاعری کی سب سے خاص بات جس نے قاری کو سب سے زیادہ متاثرکیاوہ یہ کہ اِن دونوں نے اپنی شاعری میں ایسے الفاظ کا استعمال کیاجس کا استعمال اُن سے پہلے کم ہوتا تھا۔ آپ نے یہ بھی فرمایاکہ غالب کی غزلوں میں ہمیں حادثوں کاذکر ملتاہے اور شادمانی کابھی اوریہی باتیں ہمیں کبیرکی شاعری میں بھی دکھائی دیتی ہیں، گھرکاجو تصور غالب کے یہاں ہے وہ کبیر کے یہاں بھی ہمیں دکھائی دیتاہے اس تناظرمیں آپ نے غالب کا مصرعہ بھی پڑھ کر سنایا۔

’عرش سے اِدھر ہوتا کاش کے مکاں اپنا‘

آخر میں آپ نے یہ بھی فرمایاکہ اِن حالات میں ہم ادیبوں کی یہ ذمہ داری ہے کہ ہم ایسے شاعروں کو ضرور یاد کریں جنہوں نے ملک کو جوڑ نے کی بات کہی ہے۔ اس سے قبل غالب انسٹی ٹیوٹ کے سکریٹری پروفیسر صدیق الرحمن قدوائی اپنے تعارفی کلمات میں اشوک باجپئی کاخیر مقدم کرتے ہوئے کہاکہ آج یہ خطبہ اپنے موضوع کے اعتبارسے کافی اہم ہے او رہمیں پوری امید ہے کہ اشوک باجپئی اس موضوع کے تعلق سے ہماری سامنے ایسی باتیں پیش کریں گے جس سے ہمیں اِن دونوں شاعروں کو ایک نئے انداز سے سمجھنے میں مدد ملے گی۔ غالب انسٹی ٹیوٹ کے وائس چیرمین ڈاکٹر پرویز علی احمدنے اپنے صدارتی کلمات میں اِن عظیم شاعروں کو خراج عقیدت پیش کیا۔ جلسے کی ابتدامیں غالب انسٹی ٹیوٹ کے ڈائرکٹر ڈاکٹر رضاحیدرنے اشوک باجپئی کاتعارف کراتے ہوئے کہاکہ اشوک باجپئی اپنی تحریروں اور تقریروں سے جتنے ہندی والوں میں مقبول ہیں اتنی ہی مقبولیت اُن کی اردو داں طبقوں میں بھی ہے۔ آپ کی ایک خاص بات یہ بھی رہی ہے کہ آپ نے ہندی اور اردو ادب کی مشترکہ روایتوں کو ہمیشہ ایک دوسرے سے جوڑ کراپنی تقریروں اور تحریروں میں پیش کیا ہے۔ اس جلسے میں جسٹس بدر دُرریزاحمد، جسٹس نجمی وزیری، محترمہ رخشندہ جلیل، پروفیسر طاہر محمود، پروفیسر شمس الرحمن فاروقی، پروفیسر شمیم حنفی، پروفیسر خواجہ محمداکرام الدین اور شاہد ماہلی کے علاوہ بڑی تعداد میں مختلف علوم و فنون کے افراد موجود تھے۔

تھے۔







جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے